Posts

On Cue:

 Rabi ul awl in the sub-continent brings with it a festivity unique to the people of this region alone. The sporadic dusting of green lights here and there near the 12th has been replaced by a full fledge month long celebration now. Most big city buildings are lit up in green after Maghreb. The banners of different organisations welcoming the month and competing in a verbose religiosity representative of each one's own 'loyal version'.  Each claiming an entitlement to the righteous legacy of the beloved Prophet Muhammad (SAW). Some claim "political governance" is his legacy. Some claim the same for  "military leadership". Some push for the re-instatement of the 'ideal khilafah'. Some chant democratic anthems. None yet able to convince the masses to follow the beloved Prophet's sunnah in their behaviours. His actual forte was his 'Ikhlaq'(character) which won him all yet it faces abandonment by his loyal followers. His strength was his

آسان لفظوں میں:

جدید   قومی   ریاست   اور   فریج    جدید   دور   کے   ٹیکنالوجکل   ڈٹرنزم  (technological determinism)  میں   فریج   کی   اہمیت   پر   غور   و   فکر   کیا   جائے   تو   کچھ   عجب   نا   ہوگا۔   یہ فریج   ایک   گھر   کی   معیشت،   معاشرت   اور   سیاست   تینوں   جہتوں   میں     ایک   موثر   کردار   ادا   کرتا   ہے۔  (  یقین   نا   آئے   تو   محلے   کی   باجی   سے رجوع   کریں ) کچن   میں   رکھا   جائے   تو   اپنی   مدد   آپ   اسکیم،   ڈرائینگ   روم   یاکامن   روم   میں   رکھ   دیا   جائے   تو   جاسوسی   مہم،   سونے   والے   کمروں   کی راہدری   میں   تو     معاشی   مفاہمت   اور   بیٹے،بہو   کے   کمر   ے   کے   اندر   تو   صریح   جنگی   چال۔   خاندان   کے   پارلیمان   میں   فریج   کے   اس   کردار   کو   جس   نے   سمجھ   لیا   تو   گویا   فوکو  (foccault)  کے   مائی   باپ   نطشے  (Nietzsch) اور   فرائڈ (freud) کی   انتشار   پسند   تنظیم   کو   سمجھ   لیا۔   یہاں   پر   فریج   ساسو   ماں   کے   اقتدارِ   اعلی  (sovergnity)  کا   نشان   ہے۔   جنگی   چال   مثالی   اقتدار   کی   عدم   موجودگی (

On cue: Teenage brains and pedagogy

Image
 "What we know now is that no two human brains are wired exactly the same and experience shapes us all differently. Its the final frontier, our own internal frontier and we are just now beginning to see all the patterns" writes neurologist Frances.E Jensen in her book "The teenage brain, A neuroscientists guide to raising adolescents and young adults". She wonders further: "When i look at the brain cells under a microscope, I think of the billions of neurons  that are interconnected and how we are still trying to figure out the wiring" Dr Jensen wrote this book not only as a doctor but also as a mother to two teenage boys. Her spatial intelligence enhanced the visual imagery inside and every time she dealt with  teenage behaviour she would imagine the physical reality of the wires and bleeps inside. The book makes an interesting read for any mother struggling with her teens. What intrigued me most and made me stop and reflect was the line I quoted in the b

آسان لفظوں میں:

 اختیار اور ذمہداری کا رشتہ آپس میں بالکل ایسا ہے جیسے جسم اور روح کا۔ جس اختیار کے استعمال میں سے احساسِ ذمہداری نکل جائے اور اختیار کا جنون خوفِ محرومی میں مبتلا کردے وہ اختیار جبر میں تبدیل ہوجاتا ہے۔ طاقت کی یہ جبری شکل  فرد کو ایک مستقل گناہ گار اور اقرار و تسليم کو ایک مستقل ضرورت بنا کر افراد پر اپنا اختیار استوار کرتی ہے۔ اس اقرار و تسليم اور ازلی گناہ کی کیفیت میں  آجکل کے وی لوگز اور میڈیا میں مذہبی اور غیر مذہبی افراد یکساں شکار ہیں۔  اس نفسيات کو فوکو بھائی 'confession' کے نام سے عیسائیت کی بگڑی ہوئی شکل سے منسوب کرتے ہیں۔   یہی دانش اس دور کی نفسیات کی نبض پر براجمان ہے۔ اس کے لیے ہم فوکو(Foucault) بھائی سے سخت نالاں ہیں  جو خود تو اس دنیا سے کوچ کرگئے مگر انجانے میں اپنے پیچھے آنے والوں کو اختیار سے کھیلنے کے پُرتشدد راستے دکھا گئے۔ اس مسئلے کو لے کر ہمارے دینی بہن بھائی تمام مغربی سوچ کے ہی دشمن ہوجاتے ہیں اور ہمارے آزاد بہن بھائی مذہب کے اجاراہ داروں کے دشمن۔ مگر یہ مسئلہ دراصل مذہب پر عمل کا مسئلہ ہے ہی نہیں۔ یہ مسئلہ مذہب کو طاقت کی خاطر بگاڑے کا مسئلہ ہے۔

The cat woman and bat man Bhai; An introductory lesson in sociology 101

Image
CAT WOMAN: The convenient feminist BAT MAN BHAI : Saviour of the convenient feminist planted by the patriarchy The cat woman:  "there is no milk in the fridge" Bat man bhai: "I bought three bottles of milk yesterday" The cat woman: "I can't see them" Bat man bhai: "try moving your eyeballs" The cat woman: "did you just insult me" Batman bhai: "I just tried helping you" The cat woman: "I never asked for help" The bat man bhai: "you said you couldn't see" The cat woman: "that was a statement not a cry for help" The bat man bhai: "statements end with a full stop or and exclamation mark not a question mark" The cat woman: "you can hear punctuation" The bat man bhai: "Is that a question?" The cat woman: "no" The bat man bhai: "I thought so" A loud blast and a crash is heard. The bat man bhai:  " I helped the neighbours daughter get out but

باجی کا دوپٹہ

میری   باجی   اور   میں   بالکل   ایسے   ہیں   جیسے   یک   جان   دو   قالب۔   یہ   کہنا   بھی   غلط   نا   ہوگا   کہ   باجی   کی   خاطر   میں   نے   کافی   جسمانی   صعوبتیں   بھی برداشت   کیں۔   چھوٹے   ہوتے   ہوئے   باجی   مجھی   کو   آنکھ   مچولی   میں   کس   کر   بھائی   یا   سہیلی   کی   آنکھ   پر   باندھ   دیتییں   تھیں۔   مجھی   کو   پھیلا   کر   سارے   شہتوت   چگتییں۔   کالج   جاتے   جاتے   باجی   نے   میرے   استعمال   میں   جو   بدعات   ایجاد   کیں   ۔   اُن   کا   حساب   تو   اللہ   ہی   اُن   سے   لے   گا۔   رکشے   کی   ہر   سواری میں   باجی   مجھے   بل   دے   کر   تیار   رکھتیں۔   کوئی   انجانا   موڑ   کاٹا   تو   میں   رکشے   والے   کے   گلے   کے   گرد   کسنے   کے   لئے   تیار۔   وہ   تو   اللہ   کا   لاکھ   لاکھ شکر   آج   تک   باجی   کے   ساتھ   کسی   رکشے   والے   کی   غلط   موڑ   کاٹنے   کی   جرات   نہیں   ہوئی۔   زخم   رِسے   یا   ناک۔   دونوں   کو   صاف   رکھنے   میں   باجی   کے   کام   سب   سے   پہلے   میں   ہی   آیا۔   جتنے   ٹوٹے   پیسے   ہوتے   وہ   باجی   مجھی  

A new feminine at the heart of a communal spirit.

Human beings are not the only living beings who thrive in a sense of communal belonging. Its this very basic need to belong that begets relationships and society for us. The very first human communities can be traced to the earliest civilisations.  Toys, jewellery and handicrafts from Sumerian, Indus and Egyptian civilisations all are a physical representation of that sense of community and belonging. Women pulling water, animals pulling carts, water flowing and birds flying. To each image belongs a story, a moment, a feeling etched in history. To own and belong is a human need like food, water and health. Human beings have for long fought and made peace only for this need. To own a piece of land or to belong to one. To own wealth or to belong amongst the wealthy. To own another or to belong to another. It is this very capacity of a basic human need in overpowering human will to an extent that it becomes a drive that Allah swt commands us to practice 'adl'. A practice of  human